بی آر آئی اور سی پیک جیسے منصوبے بنیادی ڈھانچے کے ساتھ صحت کے شعبے کی ترقی میں اہم کردار ادا کر سکتے ہیں
COVID-19 CPEC Top News اردو نیوز

بی آر آئی اور سی پیک جیسے منصوبے بنیادی ڈھانچے کے ساتھ صحت کے شعبے کی ترقی میں اہم کردار ادا کر سکتے ہیں

 کورونا وائرس کا بحران ختم ہونے کے بعد بنیادی ڈھانچے کی ترقی کی تمام کاوشیں صحت کے شعبے کی بہتری کے ساتھ منسلک کی جانی ضروری ہیں۔ دنیا کو  نئے حالات کی مطابقت سے محدود قومی سوچ  کو خیر آباد کہتے ہوئے وسیع تر تعاون کو فروغ دینے کی ضرورت ہے۔

ماہرین نے ان خیالات کا اظہار پالیسی ادارہ برائے پائیدار ترقی (ایس ڈی پی آئی)  کے زیر اہتمام ’بیلٹ اینڈ روڈ منصوبہ بطور صحت کی شاہراہ ریشم  کے زیر عنوان آن لائن مکالمے کے دوران گفتگو کرتے ہوئے کیا۔

بورڈ آف انوسٹمنٹ (بی او آئی) کے سابق چیئرمین ہارون شریف نے کورونا وائس سے پیدا سدہ بحران نے دنیا میں قیادت کے بحران کو اجاگر کیا ہے۔ انہوں نے کہا کہ موجودہ صورت حال میں اندرونی مسائل کے باوجود چین کو آگے بڑھ کر کردار ادا کرنے کی ضرورت ہے۔

انہوں نے کہا کہ دنیا کو اس وقت وسائل کی کمیابی کا سامنا ہے اور دوسری جانب دنیا پہلے سے زیادہ تقسیم شدہ نظر آتی ہے۔

انہوں نے کہا کہ بی آر آئی اور سی پیک جیسے منصوبوں کو اب انسانی ترقی پر مرکوز ہونا چاہئے۔ اس کے ساتھ ساتھ اب ہمیں ہیلتھ کئیر اکنامک زون قائم کرنے کی اشد ضرورت ہے کیونکہ دنیا کو اس وقت صحت کے شعبے میں درکار اشیاء کی سخت کمیابی کا سامنا ہے۔

 ایس ڈی پی آئی کے ایگزیکٹو ڈائریکٹر ڈاکٹر عابد قیوم سلہری نے کہا کہ  عالمی اور علاقائی تعاون کے میدان میں نئی جہتیں تلاش کرنے کی ضرورت ہے۔ ہمیں صحت اور علم پر مبنی معیشت کو ترقیاتی عمل کا حصہ بنانا ہو گا۔

انہوں نے کہا چین نے قابل تعریف  انداز سے کورونا وبا کے خلاف مؤثر اقدامات کیے ہیں اور توقع ہے کہ  اس سے دنیا کے دوسرے ممالک بھی مستفید ہو سکیں گے۔

سینٹر فار نیو انکلوزو ایشیا، ملائشیا کے صدر کوہ کنگ کی  نے کہا کہ کورونا وائرس سے نمٹنے کے لیے پوری دنیا کو مل کر کام کرنے کی ضرورت ہے۔

انہوں نے کہا کہ ہمیں غذٓائی تحفظ اور زراعت پر خصوصی توجہ دینی ہو گی۔  شنگھائی انٹرنیشنل یونیورسٹی کی تانگ بیائی نے کہا کہ صحت کے شعبے میں تعاون چین کی مستقبل کی ترقیاتی کاوشوں کا اہم حصہ ہو گا۔

 انٹرنیشنل شیلر انسٹی ٹیوٹ سویڈن کے حسین عسکری نے اظہار خیال کرتے ہوئے کہا کہ بنیادی ڈھانچے کو ترقی دیے بغیر صحت کے شعبے کو ترقی دینا ممکن نہیں۔

انہوں نے کہا کہ اس حوالے سے بی آر آئی اور سی پیک کا کردار انتہائی اہمیت رکھتا ہے۔ ایس ڈپی آئی کے شکیل احمد رامے نے عالمی تعاون اور بی آر آئی جیسے منصوبوں کے صحت کے ساتھ تعلق کی مختلف جہتیں پیش کیں۔

اس موقع پر دیگر ماہرین جن میں محمد مدثر ٹیپو، ڈاکٹر زاہد احمد اور عائشہ الماس شامل تھے، نے صحت کے شعبے کی ترقی کی اہمیت اور مستقبل کے ترقیاتی منظر نامے کے مختلف پہلو اجا گر کیے۔

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *